تعلیمی و ثقافتی کمیٹی/ چہلم سے متعلقہ امور کا مرکزی دفتر

banner-img banner-img-en
logo

 ادب اور تحقیق


اجتماعی سرگرمیوں میں نفسیاتی سکون کا خیال رکھنا

پرنٹ
اجتماعی سرگرمیوں میں نفسیاتی سکون کا خیال رکھنا

وہ مرد جو دن بھر میں دسیوں بے حجاب اور آرائش کردہ عورتوں سے متلذذہوتا ہے وہ کس طرح سکون قلب کے ساتھ اپنی ذمہ داریوں کو ادا کرسکتا ہے اور کس طرح اپنی شریک حیات کے ساتھ سکون سے رہ سکتا ہے ۔

یورپ اور امریکا میں خواتین آرائش کرکے نا محرموں کی محفل و مجمع میں پیش ہوتی ہیں تو اس کے سبب شیرازۂ حیات و خانوادہ دھیرے دھیرے بکھر جاتا ہے کیونکہ پھر بنیاد خانوادہ مستحکم نہیں رہ جائے گا تاکہ اس پر حیات و خوشحالی کی عمارت تعمیر کرسکیں ۔

جنسی آزادی اس معاشرے میں اتنی آزاد ہے کہ پھر دوام حیات و ازدواجی زندگی کی بقا کی کوئی صورت باقی نہیں رہتی ۔

یہی وجہ ہے کہ مرد لوگ عورتوں کے حسن سے بیزار ہوکر ہم جنس بازی نابالغ بچوں کے ساتھ جنسی تجاوز اور حیوانات سے بد فعلی کرتے ہیں ۔

عورتیں زینت آرائی و مقابلہ حسن میں بڑھ چڑح کر حصہ لیتی ہیں تاکہ مردوں کی توجہات مبذول کراسکیں یہاں تک کہ شادی شدہ عورتیں مردوں کو وقت ملاقات ( date) دیتی ہیں ان کا شوہر بغل کے کمرے میں بیٹھا ہوتا ہے اور یہ خلوت میں آتش ہوس کو بجھارہی ہوتی ہیں ۔

امریکہ میں اگر بیوی آدھی رات کو فحشا و منکرات سے ہوکر آتی ہے تو مرد کو قانونی لحاظ سے اعتراض کا حق نہیں ہے ۔

ہمارے معاشرے میں بھی کچھ نادان اور شہوت پیشہ اور غرب زدہ افراد کا خیال ہے کہ عورتوں کے حقوق اس وقت ادا ہوں گے جب وہ نا محرموں کے لئے خود آرا و خدنمائی میں مکمل آزاد ہو یہ لوگ مغربی خواتین کی جنسی آزادی و بے لگامی کو سراہتے ہیں اور اسلامی حجاب و پردے کی مذمت کرتے ہیں ۔

شہوت نے ان کی عقل کی آنکھوں کو اندھا کردیا ہے ان کو حقیقت کے دیکھنے کے تاب نہیں ہے ۔

یہ اس حقیقت کو سمجھنے سے قاصر ہیں کہ بے حجابی و بے عفتی انسانیت کے حق میں بہت بڑا ظلم اور عورت کے حق کی پائیمالی ہے ۔

مغربی ثقافت میں عورت مردوں کی شہوت کا بازیچہ ہے اس ماحول میں عورت کی قدر اس وقت تک ہے جس تک وہ حسین و جوان ہے لیکن جیسے اس کی جوانی ڈھلے اور حسن ماند پڑ جائے تو وہ ایک بے قیمت شی کے سوا کچھ نہیں ۔ پھر مرد ان کا پیچھا چھوڑ دیتے ہیں اور نئے و نو رسیدہ کی طرف چلے جاتے ہیں ان کے ماحول میں وہ لڑکی جس کا حسن زائل ہوگیا وہ ذلت و رسوائی کی زندگی گذارے ۔

اگر ہم مغربی ماحول کے درد ذلت کو جانتے تو انسانی معاشرے کی خدمت جو اسلام نے کی ہے اس کی زیادہ قدر کرتے ۔

یہ اسلام ہے جو حکمت ازدواج کے ذریعہ عورتوں کو عزت و شرافت و کرامت دی ہے اور گھر و خاندان کو جنت میں بدل دیا ہے ۔ اسلامی اقدار کی رعایت کے سبب مسلمانوں اورخواتین کو ایسا جنت نظیر بنا دیا ہے کہ یورپی خواتین رشک کرتی ہیں ۔ امریکائی اور مغربی خواتین جب اپنے آپ کو اس دلدل سے آزاد کرتی ہیں ۔ اور ایرانی خواتین کی عزت و کرامت کو دیکھتی ہیں تو ورطہ حیرت میں غرق ہوکر رشک کرتی ہیں ۔ [1]

 

[1] میں مغربی عورتوں کو رشک کرتے ہوئے خود دیکھا ہے 



حوالہ جات:
بھیجنے والا: ایڈمنسٹریٹر
 چہلم کے تعلیمی اور ثقافتی چینل میں سبسکرائب کریں

پرنٹ

ٹیگز اجتماعی۔ سرگرمیوں۔نفسیاتی۔ سکون خیال رکھنا

تبصرے


تبصرہ بھیجیں


Arbaeentitr

 حدیثیں

 دعا و زیارات